اسلام آباد: 24؍دسمبر 2022ء (آن لائن نیوز ڈیسک) پاکستان میں نافذ انگریز دور کا 162 سال پرانا قانون ختم کردیا گیا، صدر مملکت عارف علوی کی منظوری کے بعد خودکشی کی کوشش پر سزا دینے کا قانون ختم کر دیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے قانون میں خودکشی کی کوشش پر سزا کو ختم کرنے کی منظوری دے دی۔ ایوانِ صدر کی جانب سے جاری کردہ اعلامیے کے مطابق صدر عارف علوی نے فوجداری قوانین (ترمیمی) بل 2022 کی توثیق کردی۔

بل کے ذریعے پاکستان پینل کوڈ 1860 میں خودکشی کی کوشش کی سزا سے متعلق سیکشن 325 کو ختم کیا گیا ہے۔ صدر عارف علوی نے بیرونی سرمایہ کاری ( فروغ و تحفظ) ترمیمی بل 2022 کی بھی توثیق کر دی ہے۔ بل کے ذریعے بیرونی سرمایہ کاری ( فروغ و تحفظ) ایکٹ 2022 کے سیکشن ایک میں ترمیم کی گئی ہے۔ صدر عارف علوی نے دونوں بل آئین کے آرٹیکل 75 کے تحت منظور کیے۔ یاد رہے کہ سینیٹ نے خودکشی کی کوشش کرنے والوں کو سزا دینے کی شق کو ختم کرنے کا بل منظور کیا تھا۔ پاکستان پینل کوڈ کے سیکشن 325 کے تحت خودکشی یا اس کی کوشش کرنا جرم تھا جس پر ایک سال جیل، جرمانہ یا دونوں سزائیں ہوتی تھیں۔ یہ بل پیپلز پارٹی نے پیش کیا تھا اور جے یو آئی نے اس کی مخالفت کی تھی۔