کامروپ:آسام کے کامروپ میٹروپولیٹن ضلع کی ایک عدالت نے گوہاٹی پولیس کو حکم دیا ہے کہ وہ لوک سبھا کے رکن مولانا بدرالدین اجمل کے خلاف خواتین اور ہندو مردوں کے بارے میں مبینہ طور پر متنازعہ تبصرے پر ایف آئی آر درج کرے۔
آسام جاتیہ پریشد کے نائب صدر دولو احمد کی طرف سے دائر درخواست کی سماعت کرتے ہوئے، اسپیشل جوڈیشل مجسٹریٹ پرنجیت ہزاریکا نے گوہاٹی کے ہاتھیگاؤں پولیس اسٹیشن کے افسر انچارج سے ایف آئی آر درج کرنے کو کہا۔


عدالت نے 13 دسمبر کو اپنے حکم میں او سی یا ماتحت افسر سے بھی کہا کہ وہ مبینہ طور پر اے آئی یو ڈی ایف کے سربراہ کے متنازعہ ریمارکس کی تحقیقات کریں اور حتمی رپورٹ پیش کریں۔
احمد نے اس وقت عدالت سے رجوع کیا تھا جب ہاتھیگاؤں پولیس اسٹیشن نے مبینہ طور پر اجمل کے خلاف 3 دسمبر کو ان کی شکایت درج نہیں کی تھی۔
درخواست کے مطابق اس کے بعد اے جے پی لیڈر نے 6 دسمبر کو شکایت کے ساتھ گوہاٹی پولیس کمشنر سے رابطہ کیا تھا، لیکن اس کا کوئی نتیجہ نہیں نکلا،
عدالت نے "پولیس کی بے عملی” کا نوٹس لیا اور مشاہدہ کیا کہ پولیس کمشنر نے "اس پر کوئی توجہ نہیں دی” اور نہ ہی ہاتھیگاؤں پولیس اسٹیشن اور نہ ہی کمشنریٹ آفس کے قانون نافذ کرنے والوں نے کوئی
پہل کی۔حکم میں کہا گیا ہے کہ "شکایت سننے اور شکایت کی جانچ پڑتال پر، ایسا لگتا ہے کہ فوری کیس کے سلسلے میں پولیس کی تفتیش کی ضرورت ہے۔”


واضح ہو مولانا اجمل نے 2 دسمبر کو ایک میڈیا ہاؤس کے ساتھ انٹرویو میں خواتین اور ہندو مردوں کے ساتھ ساتھ چیف منسٹر ہمنتا بسوا سرما پر تبصرہ کیا تھا، جو مبینہ طور پر ‘لو جہاد’ پر سرما کے ریمارکس کے ردعمل کے طور پر کیا گیا تھا۔
دھوبری کے ایم پی، جو ایک ’مولانا‘ کے طور پر قابل احترام ہیں، نے مبینہ طور پر ہندوؤں کو مسلمانوں کی طرح زیادہ بچے پیدا کرنے کے لیے کم عمری میں شادی کرنے کا مشورہ دیا۔
ان کا تبصرہ شدید ردعمل کا باعث بنا، ایم پی نے اگلے دن معافی مانگی اور کہا کہ وہ اس تنازعہ پر "شرمندہ” ہیں۔ تاہم، انہوں نے اصرار کیا کہ ان کے تبصروں کو توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا تھا اورانہوں نے کسی کمیونٹی کو نشانہ نہیں بنایا تھا۔
بہت سے دوسرے لوگوں نے بھی ریاست بھر میں مختلف مقامات پر پولیس شکایات درج کرائی تھیں۔