زرعی قوانین کو واپس کرنے والے بل کو مرکزی کابینہ نے دی منظوری۔
نئی دہلی: مرکزی کابینہ نے تین زرعی قوانین کو واپس کرنے کے بل کو منظوری دے دی گئی ہے۔ ذرائع نے۔ غور طلب ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعہ کو قوم سے اپنے خطاب میں تینوں زرعی قوانین کو واپس لینے کا اعلان کر کے سب کو حیران کر دیا تھا۔ تاہم، وزیر اعظم کی طرف سے زرعی قوانین کو واپس لینے کے اعلان کے باوجود، کسان اس وقت اپنا احتجاج ختم کرنے کو تیار نہیں ہیں۔ لکھنؤ میں منعقدہ کسان مہاپنچایت میں کسانوں نے کہا کہ کاشتکاری کے کالے قوانین کو واپس کرنا کافی نہیں ہے، ان کا احتجاج اس وقت تک جاری رہے گا جب تک ایم ایس پی گارنٹی قانون نافذ نہیں کیا جاتا اور پہلے سے تیار کسان مخالف بلوں کو منسوخ نہیں کیا جاتا۔
جمعہ کو اپنے خطاب میں وزیر اعظم نے کہا تھا کہ ہم کسانوں کو یقین دلانے کے قابل نہیں ہیں۔ کسانوں کا صرف ایک طبقہ ہی قوانین کی مخالفت کر رہا ہے لیکن ہم انہیں اس کے فائدوں سے آگاہ کرنے کی کوشش کرتے رہے۔ ہم نے کسانوں کو راضی کرنے کی پوری کوشش کی۔ ہم قوانین میں ترامیم کے لیے تیار تھے، معاملہ اب سپریم کورٹ میں بھی پہنچ گیا ہے، ہم کسانوں کو راضی نہیں کر سکے۔ یہ وقت کسی پر الزام لگانے کا نہیں ہے۔ میں سب کو بتانا چاہتا ہوں کہ ہم نے زرعی قوانین کو واپس لے لیا ہے۔ ہم زرعی قوانین کو منسوخ کر رہے ہیں اور رواں ماہ پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں باضابطہ طور پر ان قوانین کو واپس لے لیا جائے گا۔ غورطلب ہے کی 29 نومبر سے پارلیمنٹ کا سرمائی اجلاس شروع ہوگا جس کے کافی ہنگامہ خیز ہونے کی توقع ظاہر کی جا رہی ہے۔

DT Network