ملک کا سب سے بڑا بینک گھوٹالہ، دو بھائیوں نے 34615 کروڑ کا چنا لگایا، سی بی آئی نے معاملہ درج کیا۔
نئی دہلی :(ایجنسی)
ملک میں اب تک کا سب سے بڑا بینک فراڈ کا انکشاف ہوا ہے۔ یہ گھوٹالہ 34,615 کروڑ کا بتایا جا رہا ہے۔ اس معاملے میں سی بی آئی نے دیوان ہاؤسنگ فائنانس کارپوریشن لمیٹڈ (ڈی ایچ ایف ایل) کے سابق سی ایم ڈی کپل وادھاون اور ڈائریکٹر دھیرج وادھاون کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے۔ الزام ہے کہ دونوں بھائیوں نے مل کر یونین بینک آف انڈیا کی قیادت میں 17 بینکوں کے ایک گروپ کو 34 ہزار کروڑ سے زیادہ کا فراڈ کیا ۔
اس سے قبل اے بی جی شپ یارڈ کی 22 ہزار کروڑ روپے کی دھوکہ دہی کا معاملہ سامنے آیا تھا۔ اسی وقت نیرو مودی اور میہول چوکسی پنجاب نیشنل بینک کو 13,000 کروڑ روپے ادا کیے بغیر ملک سے فرار ہو گئے تھے۔

گھوٹالہ کیسے ہوا؟
یہ کیس یونین بینک آف انڈیا (یو بی آئی) کی شکایت پر سی بی آئی نے درج کیا ہے۔ UBI کی شکایت کے مطابق، DHFL نے 2010 اور 2018 کے درمیان یونین بینک کی قیادت میں 17 بینکوں سے 42,000 کروڑ روپے سے زیادہ کا قرض لیا تھا۔ جس میں سے 34,615 کروڑ روپے بقایا ہیں۔ قرض کو 2019 میں این پی اے (نان پرفارمنگ اثاثہ) اور 2020 میں دھوکہ دہی قرار دیا گیا تھا۔

بینک نے الزام لگایا ہے کہ کپل اور دھیرج وادھاون نے دوسروں کے ساتھ مل کر ایک سازش کے تحت حقائق کو چھپایا اور غلط بیانی سے کام لیا۔ ساتھ ہی انہوں نے دھوکہ دہی کے ذریعے عوام کے پیسے کا غلط استعمال کیا ہے۔
اس کے ساتھ یہ الزام ہے کہ ڈی ایچ ایف ایل نے ان کاموں میں پیسہ نہیں لگایا جس کے لیے وہ بینکوں سے قرض لیتی تھی، بلکہ یہ رقوم ایک ماہ کے قلیل عرصے میں دوسری کمپنیوں کو منتقل کر دی گئیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق تحقیقات کے دوران یہ بھی پتہ چلا کہ قرض کی رقم سدھاکر شیٹی نامی شخص کی کمپنیوں کو بھی بھیجی گئی تھی، ساتھ ہی یہ رقم دیگر کمپنیوں کے مشترکہ منصوبوں میں بھی لگائی گئی تھی۔ تفتیش میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ قرض کی رقم 65 سے زائد کمپنیوں کو بھیجی گئی، اس کے لیے اکاؤنٹ بک میں فراڈ کیا گیا۔

12مقامات پر چھاپے
بدھ کو سی بی آئی نے اس معاملے میں ممبئی کے 12 مقامات پر چھاپے مارے۔ سی بی آئی کے 50 سے زیادہ افسران کی ٹیم نے دستاویزات کی چھان بین کی اور شواہد اکٹھے کئے۔ چھاپوں کے دوران سی بی آئی نے کئی اہم دستاویزات اور الیکٹرانک آلات ضبط کئے ہیں۔
ساتھ ہی، اس معاملے میں، سی بی آئی نے ڈی ایچ ایف ایل کے سابق سی ایم ڈی کپل وادھاون، ڈائریکٹر دھیرج وادھاون، سدھاکر شیٹی اور دیگر کمپنیوں گلمرگ ریلیٹرز، اسکائی لارک بلڈکان درشن ڈیولپرز، ٹاؤن شپ ڈیولپرزسمیت کل 13 لوگوں کے خلاف مختلف مجرمانہ دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا ہے۔

بتا دیں کہ کپل اور دھیرج وادھاون پہلے ہی جیل میں ہیں۔ دونوں کو یس بینک فراڈ کیس میں سی بی آئی اور ای ڈی کیس کی بنیاد پر گرفتار کیا گیا تھا۔

ڈی ایچ ایف ایل 2021 میں فروخت ہوگئی تھی

ستمبر 2021 میں پیرامل گروپ نے  DHFL  کو خریدلیاتھا۔ پیرامل انٹرپرائزز لمیٹڈ نے بحران سے دوچار کمپنی دیوان ہاؤسنگ فائنانس لمیٹڈ (DHFL) کو 38,050 کروڑ روپے میں خریدا تھا۔ اس کے ساتھ ہی ڈی ایچ ایف ایل کے قرض دہندگان کو 34,250 کروڑ روپے بھی ادا کیے گئے تھے۔