کابل: طالبان نے نو سال بعد بانی طالبان امیر ملا محمد عمر کی تدفین کا مقام بتا دیاہے۔غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق طالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے ملا محمد عمر کی آخری آرام گاہ کی تصاویر سوشل میڈیا پر شیئر کرتے ہوئے ۲۰۱۳میں وفات پانے والے ملا محمد عمر کی قبر کا مقام بتا دیا۔ملا محمد عمر کی قبر افغان صوبے زابل کے ضلع سیوری میں موجود ہے جہاں تصاویر میں قبر پر فاتحہ خوانی کیلئے طالبان وزیراعظم ملا حسن اخوند اور افغان کابینہ کے دیگر ارکان کو دیکھا جا سکتا ہے۔غیر ملکی خبر ایجنسی سے بات کرتے ہوئے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کا کہنا تھا کہ ملک پر قبضے اور دشمنوں کی جانب سے قبر کو نقصان پہنچانے کے خدشے پر قبر کا مقام خفیہ رکھا گیا تھا تاہم اب ایسا کوئی خطرہ نہیں، لوگ ملا محمد عمر کی قبر کی زیارت کر سکتے ہیں۔یاد رہے کہ بانی طالبان ملا عمر کا انتقال ۲۰۱۳میں تقریباً ۵۵ سال کی عمر میں ہوا تھا۔ انہوں نے سن ۱۹۹۳ میں طالبان کی افغانستان میں سوویت یونین کے ایک دہائی طویل قبضے کے بعد جاری رہنے والی تباہ کن خانہ جنگی کے دوران تحریک کی بنیاد رکھی تھی۔