نئی دہلی: یکم جنوری سے چین، ہانگ کانگ، جاپان، جنوبی کوریا، سنگاپور اور تھائی لینڈ سے بھارت آنے والے مسافروں کے لیے منفی کووڈ رپورٹ پیش کرنا لازمی ہوگا۔ مرکزی وزیر صحت منسکھ منڈاویہ نے جمعرات کو یہ اطلاع دی۔ منڈاویہ نے کہا کہ ایسے مسافروں کو سفر سے پہلے اپنے آر ٹی پی سی آر ٹیسٹ کی منفی رپورٹ ایئر سوویدھا پورٹل Air Suvidha Portal پر شیئر کرنی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کا سفر شروع کرنے سے 72 گھنٹے کے اندر کووڈ ٹیسٹ کروانا ہوگا۔ وزیر صحت نے کہا کہ یہ قاعدہ بھارت پہنچنے پر تمام بین الاقوامی پروازوں کے دو فیصد مسافروں کی بے ترتیب جانچ کے علاوہ ہے۔واضح رہے کہ کچھ ممالک میں کورونا وائرس کے کیسز میں اضافے کے درمیان حکومت نے محتاط رویہ اپنایا ہے اور کووڈ گائیڈ لائنز کو سخت کردیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کے لیے تیار رہنے کو کہا گیا ہے۔ اہم بات یہ ہے کہ مرکزی وزیر صحت منسُکھ منڈاویہ نے ہفتہ کو ہی اس کا اشارہ دیا تھا کہ چین، جاپان، جنوبی کوریا، ہانگ کانگ اور تھائی لینڈ سے آنے والوں کے لیے آر ٹی پی سی آر ٹیسٹ لازمی ہوگا۔ مرکز نے کہا ہے کہ اگر ان ممالک سے آنے والے کسی مسافر میں کووڈ 19 کی علامات پائی جاتی ہیں یا ٹیسٹ مثبت پایا جاتا ہے تو اسے قرنطینہ میں رکھا جائے گا۔دریں اثنا ریاستوں کو بھی الرٹ موڈ پر رہنے اور جینوم کی ترتیب کو تیز کرنے کے لیے کہا گیا ہے تاکہ مثبت معاملات میں نئی ​​اقسام کا پتہ لگایا جا سکے۔ ملک میں ایک دن میں کورونا وائرس کے انفیکشن کے 268 نئے کیسز سامنے آنے کے بعد ملک میں اب تک متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 4 لاکھ 46 ہزار 77 ہزار 915 ہوگئی ہے جب کہ زیر علاج مریضوں کی تعداد 3 ہزار 552 ہو گئی ہے۔ جمعرات کی صبح آٹھ بجے مرکزی وزارت صحت کی طرف سے جاری کردہ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق مہاراشٹر میں انفیکشن کے ایک مریض کی موت کے بعد وائرس سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 53 لاکھ 6 ہزار 968 ہوگئی۔