کیا اب منوّر رانا کرینگےیوپی سے "پَلا یَن"؟؟
لکھنؤ: ( محمّد کفیل)
موجودہ اسمبلی انتخاب میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے بھر پور اکثریت سے فتح کا پرچم لہرانے کے بعد اپنے بیانوں سے سرخیوں میں رہنے والے مشہور شاعر منور رانا ایک بار پھر عوام اور سوشل میڈیا میں صارفین کے نشانے پر ہیں۔ 
در اصل منور رانا نےانتخاب سےقبل اپنے ایک انڑرویو میں کہا تھا کہ اگر یوگی آدتیہ ناتھ دوبارہ وزیر اعلیٰ بنے تو وہ یوپی چھوڑ دیں گے۔ جسکے بعداب میڈیا رپورٹس کے مطابق بھوپال کے معروف شاعر منظر بھو پالی نے کہا ہے کہ اعلان کے مطابق منور رانا اب اپنی بات پر عمل کریں ورنہ ان کی شاعری بھی جھوٹی ہے اور وہ خود بھی۔

دراصل اتر پردیش میں 18ویں قانون ساز اسمبلی کی تشکیل کے لیے ہونے والے انتخابات کے دوران مشہور شاعر منور رانا نے بیان دیتے ہوئے کہا تھا کہ اگر یوگی آدتیہ ناتھ ریاست میں دوبارہ وزیر اعلیٰ بنتے ہیں تو وہ اتر پردیش چھوڑ دیں گے۔ 10 مارچ کو ہونے والے اسمبلی انتخابات کے ووٹوں کی گنتی میں بھارتیہ جنتا پارٹی ایک بار پھر زبردست جیت حاصل کرکے اتر پردیش میں اپنی حکومت بنانے جا رہی ہے۔ یہ بھی یقینی ہے کہ وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ ایک بار پھر ریاست کی باگ ڈور سنبھالیں گے۔
بی جے پی کی جیت کے ساتھ ہی لوگوں نے شاعر منور رانا کو ان کے بیان کے لیے گھیرنا شروع کر دیا ہے۔ 
 شاعر منظر بھوپالی نے کہا کہ عوام صرف یہ پوچھے گی کہ یہ تو خود آپ ہی نے کہا تھا، آپ سے کسی نے نہیں پوچھا تھا کہ آپ یوپی چھوڑیں گے یا نہیں؟ بھوپالی نے مزید کہا کہ میرے فارم ہاؤس کے دروازے آپ کے لیے ہر وقت کھلے ہیں۔
دوسری طرف مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا نے منور رانا کو مشورہ دیا ہے کہ وہ یوپی چھوڑنے کا ارادہ ترک کر دیں۔ کیونکہ اب اتر پردیش میں یوگی راج ہے اور یہ رام راجیہ ہے جس میں سب کے لئے جگہ ہے،ہاں اگر ایس پی برسرِاقتدار آتی تو آپ کو یوپی چھوڑنا پڑتا،
اب یہ دیکھنا دلچسپ ہوگا کہ منوّر رانا یوپی سے پَلایَن کرتے ہیں یا اپنی بات سے مکرجائینگے؟؟

DT Network