مبارکپور کے بعد اب کانپور کے اس مدرسہ پر چلا یوگی سرکار کا بلڈوزر، مدرسہ منتظم نے کہا جان بوجھ کر مدرسہ کو نشانہ بنایا گیا، میری ذاتی زمین پر تعمیر تھا مدرسہ۔
کانپور: مبارکپور کے بعد کانپور میں بھی ایک مدرسہ پر یوگی سرکار کا بلڈوزر چل گیا۔  الزام ہے کہ کانپور کے گھاٹم پور کا اسلامیہ مدرسہ سرکاری زمین پر بنایا گیا ہے۔ جس پر بدھ کو ایس ڈی ایم انوپ چودھری نے بھاری طاقت کے ساتھ بلڈوزر چلانا شروع کرایا۔ اس دوران مدرسہ کے پرنسپل نے کہا کہ یہ زمین ہماری پرائیویٹ ہے، لیکن انتظامیہ نے ان کی کوئی دلیل نہیں مانی۔
دراصل، کانپور میں حکومت کی منشا کے مطابق چلائی جا رہی اینٹی لینڈ مافیا مہم کے تحت بدھ کی دوپہر، ڈپٹی کلکٹر گھاٹم پور آیوش چودھری، پولس افسر سشیل کمار دوبے، انسپکٹر انچارج گھاٹم پور ایس کے سنگھ کے ساتھ بھاری پولیس فورس نے گجنیر روڈ پر واقع مدرسہ اسلامیہ کے کمروں پر بلڈوزر چلا دیا 
انہدامی کاروائی کے دوران وہاں بڑی تعداد میں لوگ جمع ہو گئے۔ موقع پر موجود پولیس نے تمام لوگوں کو مدرسہ سے باہر کر دیا اور مدرسہ میں پڑھنے والے بچوں کو بھی مدرسے سے دور رہنے کی ہدایت کی۔ اطلاع پر موقع پر پہنچنے والے پرنسپل انتظار احمد نے شدید احتجاج کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ بغیر اطلاع کے مسماری کی کارروائی کی گئی۔
تاہم اس وقت تک مدرسہ پر بلڈوزر چلا چکا تھا۔ اس دوران مدرسہ کے لوگوں کی پولیس والوں سے ہاتھا پائی بھی ہوئی۔ انتظار احمد نے الزام لگایا کہ اینٹی لینڈ مافیا سکواڈ نے جس جگہ مسماری کی کارروائی کی ہے وہ میری ذاتی زمین ہے۔ اس نے اس کے سامنے دوبارہ پیمائش کرنے کا مطالبہ کیا۔
ایس ڈی ایم گھا ٹم پور آیوش چودھری نے تالاب کی دوبارہ پیمائش کا یقین دلایا ہے جس کے بعد باقی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ پرنسپل انتظار احمد نے الزام لگایا کہ لینڈ مافیا مخالف کارروائی کی آڑ میں مدرسے کو جان بوجھ کر نقصان پہنچایا گیا۔