طلاق حسن بھی ختم ہو، سپریم کوٹ میں پٹیشن دائر۔
نئی دہلی ( ایجنسی )سپریم کورٹ میں ایک درخواست دائر کی گئی ہے جس میں ‘طلاق حسن’ اور ‘یکطرفہ ماورائے عدالت طلاق’ کی دیگر تمام شکلوں کو ختم کرنے اور انہیں غیر آئینی قرار دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ درخواست میں دعویٰ کیا گیا کہ طلاق کی یہ شکلیں من مانی، غیر معقول اور بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہیں۔ درخواست میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ‘طلاق حسن’ اور اس طرح کے دیگر یکطرفہ ماورائے عدالت طلاق کے طریقہ کار صوابدیدی اور غیر معقول ہیں اور بنیادی حقوق کی خلاف ورزی کرتے ہیں۔

غازی آباد کی رہائشی بے نظیر حنا کی طرف سے دائر درخواست میں مرکز سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ تمام شہریوں کے لیے طلاق کے لیے مشترکہ بنیاد اور طریقہ کار کے لیے رہنما اصول وضع کرے۔ درخواست گزار نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ "یکطرفہ ماورائے عدالت طلاق حسن” کا شکار ہوئی ہے۔ درخواست گزار نے دعویٰ کیا کہ پولیس اور اہلکاروں نے اسے بتایا کہ طلاق حسن شریعت کے تحت جائز ہے۔ ‘
طلاق حسن’ کیا ہے؟ ‘طلاق حسن’ میں مہینے میں ایک بار تین ماہ کی مدت میں ‘طلاق’ دی جاتی ہےیعنی ہر طہر میں ایک طلاق دی جاے اور یہی احسن طریقہ ہے ۔ تیسرے مہینے میں تیسری بار ‘طلاق’ کہنے کے بعد طلاق کو باقاعدہ بنایا جاتا ہے۔ درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ سپریم کورٹ طلاق حسن اور ماورائے
عدالت طلاق کی دیگر اقسام کو غیر آئینی قرار دے۔


 
ہندوستان آن لائن کی خبر کے مطابق ایڈوکیٹ اشونی کمار دوبے کے توسط سے دائر درخواست میں کہا گیا، ’’مسلم پرسنل لا (شریعت) درخواست ایکٹ 1937، ایک غلط فہمی کا اظہار کرتا ہے کہ یہ قانون طلاق حسن اور دیگر تمام قسموں کے ماورائے عدالت طلاق کو منع کرتا ہے۔ "جو شادی شدہ مسلم خواتین کے بنیادی حقوق کے لیے انتہائی نقصان دہ ہے اور آئین ہند کے آرٹیکل 14، 15، 21 اور 25 اور شہری اور انسانی حقوق سے متعلق بین الاقوامی کنونشنوں کی خلاف ورزی کرتا ہے۔ عرضی میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ بہت سے اسلامی ممالک نے اس طرح کے عمل کو غیر قانونی قرار دیا ہے، جب کہ یہ عام طور پر ہندوستانی معاشرے کو اور خاص طور پر درخواست گزار کی طرح مسلم خواتین کو ہراساں کرنا جاری رکھے ہوئے ہے۔