نئی دہلی: تبدیلی مذہب کرانے کے الزام میں گرفتار عرفان خواجہ خان کی ضمانت پرر ہائی کی عرضداشت پر آج سپریم کورٹ آف انڈیا میں سماعت عمل میں آئی جس کے دوران دو رکنی بینچ نے ضمانت عرضداشت کو سماعت کے لیئے قبول کرتے ہوئے اتر پردیش حکومت کو نوٹس جاری کیا۔
دو رکنی بینچ کے جسٹس انیرودھ بوس اور جسٹس وکرام ناتھ کو سینئر ایڈوکیٹ نتیا راما کرشنن نے بتایا کہ ملزم ایک سال سے زائد عرصے سے جیل کی سلاخوں کے پیچھے مقید ہے، ملزم کو اتر پردیش حکومت کی جانب سے بنائے گئے متنازعہ قانون اتر پردیش پروہبیشن آف ین لاء فل کنورژن آف ریلیجن ایکٹ کے تحت ملزم کو گرفتار کیا گیا تھا اور گرفتاری کے بعد سے ہی ملزم جیل کی سلاخوں کے پیچھے مقید ہے۔جمعیۃعلماء مہاراشٹر (ارشد مدنی)قانونی امداد کمیٹی کی جانب سے ملزم عرفان کے دفاع میں پیش ہوتے ہوئے سینئر ایڈوکیٹ نتیا راما کرشنن نے عدالت کو مزیدبتایا کہ عرفان خان مرکزی حکومت کے زیر انصرام منسٹری آف ومن اینڈ چلڈرن ڈیولپمنٹ میں بطور ترجمان کام کرتا ہے نیز یو پی اے ٹی ایس نے ملزم پر جو الزام لگایا ہے کہ ہ وہ گونگے بچوں کو عمر گوتم کے کہنے پر اسلام قبول کرنے میں ان کی مدد کرتے تھے اس میں کوئی صداقت نہیں ہے کیونکہ وہ عمر گوتم کو جانتے بھی نہیں ہیں اور نوئیڈا ڈیف سوسائٹی سے ان کا تعلق بھی نہیں۔ایڈوکیٹ نتیا راما کرشنن کے دلائل کی سماعت کے بعد عدالت ضمانت عرضداشت کو سماعت کے لیئے قبول کرتے ہوئے یو پی حکومت کو نوٹس جاری کیا۔آج دوران کارروائی عدالت میں ایڈوکیٹ آن ریکارڈ ہرش پراشر، ایڈوکیٹ سارم نوید، ایڈوکیٹ کامران جاوید، ایڈوکیٹ مجاہد احمد ودیگر موجود تھے۔آج کی عدالتی کارروائی کے بعداس ضمن میں جمعیۃ علماء مہاراشٹر قانونی امداد کمیٹی کے سربراہ گلزار اعظمی نے کہا کہ سپریم کورٹ کی جانب سے یو پی حکومت کو نوٹس جاری کیا جانا خوش آئند ہے کیونکہ سپریم کورٹ کی جانب سے کسی بھی معاملے میں نوٹس جاری کیئے جانے سے اس مقدمہ کے مثبت نتائج آنے کی امید بڑھ جاتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ملزم عرفان خواجہ خان کا مقدمہ جمعیۃ علماء پہلے دن سے لڑ رہی ہے اور ملزم کی ضمانت پرر ہائی کے لیئے سیشن عدالت میں ایک مرتبہ اور لکھنؤ ہائی کورٹ میں دو مرتبہ کی گئی لیکن کامیابی نہیں مل سکی لیکن ہمیں امید ہیکہ عرفان خان کو سپریم کورٹ سے راحت حاصل ہوگی۔انہوں نے کہا کہ لکھنؤ سیشن عدالت میں بھی ملزم کی پیروی کی جارہی ہے اور مقدمہ کی ہر سماعت پر ایڈوکیٹ فرقان خان عدالت میں موجود رہتے ہیں۔خیال رہے کہ گذشتہ سال تر پردیش انسداد دہشت گرد دستہ ATS نے عمر گوتم اور مفتی قاضی جہانگیر قاسمی، مولاکلیم صدیقی سمیت کل 17ملزمین کو جبراً تبدیلی مذہب کے الزام میں گرفتار کیا تھا اور ان پر الزام عائد کیا ہیکہ وہ پیسوں کا لالچ دے کر ہندوؤں کا مذہب تبدیل کراکے انہیں مسلمان بناتے تھے اور پھر ان کی شادیاں بھی کراتے تھے۔ پولس نے ممنو ع تنظیم داعش سے تعلق اور غیر ملکی فنڈنگ کا بھی الزام عائد کیا ہے۔اس مقدمہ میں ابھی تک کسی بھی ملزم کی ضمانت نہیں ہوئی ہے، ملزم عرفان پہلا ملزم ہے جس نے سپریم کورٹ سے رجو ع کیاہے۔

سمیر چودھری۔