بیوی نے عاشق کے ساتھ مل کر کیا شوہر کا قتل، پولیس نے کیا پیچیدہ واردات کا انکشاف، عاشق جوڑا گرفتار۔ 
سہارنپور/دیوبند:  مشتبہ حالات میں دو دن سے لاپتہ تھانہ ناگل علاقے کے نینسوب گاؤں کے رہنے والے 28 سالہ مونو کمار کی لاش ہفتہ کو دیوبند کی ساکھن نہر کے قریب گنے کے کھیت سے ملی تھی۔ اس معاملے میں اتوار کو سہارنپور پولیس نے متوفی کی بیوی اور اس کے عاشق کو گرفتار کرتے ہوئے بڑا انکشاف کیا ہے۔
دراصل یہ قتل کسی اور نے نہیں بلکہ مقتول مونو کی بیوی نے اپنے عاشق کے ساتھ مل کر کیا تھا۔ پولیس کے مطابق خاتون اور اس کے عاشق نے عشق کی وجہ سے واردات کو انجام دیا۔ دونوں کو جیل بھیج دیا گیا ہے۔
چار دن قبل مونو کمار (28) ولد تیلورام ساکن نینسوب گھر سے مشتبہ حالات میں لاپتہ ہوگیا تھا، جس کے بعد اس کی بیوی سنیتا نے پولیس اسٹیشن پہنچ کر گمشدگی کی شکایت درج کرائی۔ پولیس نے بیوی کی تحریر پر گمشدگی کی شکایت درج کر لی۔ پولیس نے تلاشی لینے پر مونو کی موٹر سائیکل گنگنولی کے جنگل سے برآمد کرکے کارروائی شروع کردی۔
سنیچر کی صبح مونو کمار کی لاش ساکھن نہر کے قریب گنے کے کھیت میں پڑی ہوئی ملی، جس پر پولیس نے لاش کو اپنے قبضے میں لینا چاہا، لیکن لواحقین اور بھیم آرمی کے کارکنوں نے احتجاج کیا۔ تاہم بعد میں اعلیٰ حکام نے موقع پر پہنچ کر لوگوں کو سمجھایا اور لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے بھجوا دیا۔
اتوار کو ایس پی دیہات سورج رائے نے واقعہ کا انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ مونو کمار کا قتل محبت کی وجہ سے ہوا ہے۔ متوفی کی بیوی سنیتا کے پڑوس میں رہنے والے منوج کمار کے ساتھ گزشتہ دو سال سے ناجائز تعلقات تھے جس کی وجہ سے مقتول کی بیوی ملزم سے کہتی تھی کہ مونو کو راستے سے ہٹا دو، پھر دونوں کی شادی ہو جائے گی. اس کے بعد بیوی نے عاشق کو شوہر کو قتل کرنے کا ٹاسک دے دیا۔
ملزم عاشق منوج نے بتایا کہ واردات کے دن اس نے مونو کو فون کیا اور کہا کہ تمہیں پیسے چاہیے، مجھے ساکھن لانے ہیں میرے ساتھ آ جاؤ۔ اس پر مونو اپنی موٹر سائیکل لے آیا، جس کے بعد دونوں تلہیڑ ی پہنچ گئے۔ یہاں دونوں نے شراب خریدی اور دونوں نے ساکھن نہر کے قریب ایک بجے تک شراب پی۔ نشے میں دھت دونوں کے درمیان جھگڑا ہوا۔ جھگڑے کے بعد ملزم نے کپڑے سے گلا دبا کر قتل کردیا۔ قتل کے بعد ملزمان نے شیشہ اور شراب کی خالی بوتل نہر میں پھینک دی۔ پولیس نے دونوں کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا۔

سمیر چودھری۔